Friday, March 5, 2021
malegaontimes

بینک میں اکاؤنٹ کھلوانے گئے عالم دین کو پولیس افسر نے دہشت گرد کہا اور تذلیل کی

بہار کے ویشالی ضلع کے مہنار بازار میں واقع کینیرا بینک میں اکاؤنٹ کھلوانے پہنچے مولانا معراج عالم قاسمی کو مہنار تھانہ کی پولس کے ذریعے دہشت گرد کہہ کر تذلیل و ذہنی اذیت دیے جانے کے معاملے نے طول پکڑ لیا ـ اس کو لے کر جمعیت علماء ویشالی کے جنرل سیکریٹری مولانا آصف جمیل قاسمی و راجد لیڈر ضیاء کامران کی قیادت میں سینکڑوں مسلمانوں نے مہنار شہر کے مدن چوک پر پہنچ کر مہنار تھانہ میں مامور سب انسپکٹر سریش رام کے تبادلہ کی مانگ کرتے ہوئے پولیس کے خلاف سیاہ جھنڈا کے ساتھ جم کر نعرے بازی اور مظاہرے کیےـ

مظاہرین کا کہنا تھا کہ ایک پولیس والا بینک میں اکاؤنٹ سے متعلق کام کرانے گئے عالم کو بھرے بازار میں روک کر کہتا ہے کہ تم ایک دہشت گرد ہو تمھاری شکل دہشت گردوں جیسی ہے، کیا اس ملک میں رہنے والے مسلمان دہشت گرد ہیں؟ مظاہرین نے اس واقعے کی پرزور مذمت کی اور ایسے پولیس افسر کی فوری طور پر معطلی کی مانگ کرتے ہوئے سبھی اعلی افسران کو تحریر ی شکایت بھیجا ہےـ



مظاہرین نے بتایا کہ ہفتہ کی دوپہر میں مولانا موصوف کھاتہ کھلوانے گئے تھے اسی دوران بینک میں پولیس اہلکاروں کے ساتھ گشت کر رہے داروغہ سریش رام انہیں دیکھتے ہی ٹارچر کرنے لگے اور شناختی کارڈ دیکھنے ک بعد بھی طرح طرح کے سوالات کرتے ہوئے دہشت گرد کہہ دیا اس کی مخالفت کرنے پر پولیس والے نے انہیں جیل میں بند کر نے کی دھمکی دے دی ـ اسے دیکھ کر سامنے کے بیگ دکاندار نور تاج اور پھر مسکان خان پہنچے اور اس کی مخالفت کی تو انہیں بھی ڈانٹ پھٹکار لگایا

مولانا موصوف مہنار شہری حلقہ کے وارڈ نمبر 1 کھرجما مروت میں کئی سالوں سے بچوں کی درس وتدریس کی خدمت انجام دیتے ہیں، ساتھ ہی نیو روڈ مہنار بازار میں کتابوں کی دکان چلا کر اپنے بال بچوں کی پرورش کرتے ہیں ـ نہایت شریف ، سنجیدہ مزاج کے حافظ و عالم ہیں، ان کے تذلیل کی کی خبر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی اور دیکھتے دیکھتے لوگوں کی بھیڑ لگ گئی اور جمعیت علمائے ویشالی کی قیادت میں سینکڑوں افراد سب انسپکٹر کے خلاف تھانہ صدر و ڈی ایس پی سوشیل کمار سے ملاقات کر کے کاروائی کی مانگ کی۔

mt ads

error: Content is protected !!