Friday, March 5, 2021
malegaontimes

احتجاج کے دوران مرنے والے کسانوں پر سوال سے بی جے پی وزیر کا حیرت انگیز جواب: سماجی دوری نہیں کی وہی سے ہوئی موت

نئے زرعی قوانین پر مخالفت کے دوران لوک سبھا میں کسانوں کی موت سے متعلق تحریری سوالات پوچھے گئے۔ حکومت سے پوچھا گیا کہ کیا مرکز ان کسان سے واقف ہے جنہوں نے کسانوں کے احتجاج کے دوران اپنی جانیں گنوئی اور ان متاثرہ خاندانوں کو معاوضہ دینے کے لئے کیا اقدامات کئے گئے۔ ساتھ ہی پوچھا گیا کہ کیا حکومت کے پاس اس بات کا کوئی ثبوت ہے کہ دہشت گردوں نے تحریک میں دراندازی کی ہے۔اس کے جواب میں وزیر مملکت برائے داخلہ نیتانند رائے نے منگل کے روز پارلیمنٹ کے ایوان زیریں میں جواب دیتے ہوئے کہا کہ پولیس اور عوامی امن وامان ہندوستانی آئین کی ساتویں فہرست کے مطابق ریاست کے تحت ہے۔ انہوں نے کہا کہ امن و امان برقرار رکھنا ریاست کی ذمہ داری ہے جس میں تفتیش، ایف آئی آر، مجرمین کو سزا اور جان و مال کا تحفظ شامل ہے۔

نیتانند رائے نے کہا کہ مرکز نے قومی سلامتی کے اداروں کے توسط سے تنظیم اور دیگر کی سرگرمیوں پر گہری نظر رکھی، جو قومی سلامتی کے لئے ضروری تھا۔ جب بھی ضروری ہوا قانون کے مطابق ضروری اقدامات کئے گئے۔وزیر مملکت برائے امور برائے داخلہ کشن ریڈی نے بھی ایوان میں ایک سوال کے تحریری جواب میں کہا ہے کہ2020 ستمبر تا دسمبر کے درمیان احتجاج کرنے والے کسانوں کے خلاف 39 مقدمات درج کئے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ مظاہرہ کرنے والے کسان معاشرتی فاصلے پر نہیں جا رہے تھے اور کووڈ19 کی وبا کے دوران بڑی تعداد میں ماسک کے بغیر جمع ہوئے تھے۔ریڈی نے کہاکہ جہاں تک دہلی کا تعلق ہے، پولیس نے مطلع کیا ہے کہ ستمبر تا دسمبر 2020 کے دوران احتجاج کرنے والے کسانوں کے خلاف 39 مقدمات درج کئے گئے تھے۔

error: Content is protected !!