Friday, March 5, 2021
malegaontimes

آئی پی ایل کا شروع کرنے کا منصوبہ، بی سی سی آئی کے صدر سورو گانگولی نے ریاستی یونٹوں کو بتایا

بین الاقوامی کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی جانب سے بدھ کو اپنے اجلاس میں اکتوبر-نومبر میں شیڈول ٹوینٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ تاخیر  منعقد کرنے کے  فیصلہ کرنے کے بعد ، بی سی سی آئی نے  انڈین پریمیر لیگ (آئی پی ایل) کے معطل ایڈیشن کی تیاری کا ارادہ  ظاہر کردیاہے۔ جسکے لئے بی سی سی آئی نے اپنی منسلک ریاستی اکائیوں  سے رابطے  بھی کیے ہیں۔

صدر گنگولی نے ایک خط میں لکھا ،  بی سی سی آئی ہر ممکن اختیارات پر کام کر رہا ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ ہم اس سال آئی پی ایل کے انعقاد کے قابل ہیں،   اس کا مطلب خالی اس مرتبہ آئی پی ایل خالی اسٹیڈیموں میں کھیلا جا سکتاہے۔

 انہوں نے مزید کہا ، “شائقین ، فرنچائزز ، پلیئرز ، براڈکاسٹرز اور دیگر تمام اسٹیک ہولڈر اس سال کے آئی پی ایل کے انعقاد کے امکان کے خواہاں ہیں۔

 اگرچہ کوئی خاص مدت نہیں دی گئی ہے ، لیکن یہ بات سمجھ میں آچکی ہے کہ بی سی سی آئی بارش کے بعد ہی ہندوستان میں آئی پی ایل شروع کر سکتا ہے۔  اس کا مطلب یہ ہوگا کہ ستمبر کے اختتام سے پہلے  آئی پی ایل منعقد کرنا ناممکن ہے۔

 تمام اسٹیک ہولڈرز کے لئے  آئی پی ایل کیا معنی رکھتا  ہے اس کی مثال کے لئے ، گنگولی نے لکھا، حال ہی میں آئی پی ایل میں حصہ لینے والے ہندوستان اور دیگر ممالک کے بہت سارے کھلاڑیوں نے بھی اس سال آئی پی ایل کا حصہ بننے کی خواہش ظاہر کی ہے۔  ہم پرامید ہیں اور بی سی سی آئی جلد ہی اس پر مستقبل کے لائحہ عمل کے بارے میں فیصلہ کرے گی۔

 اگر اس سال آئی پی ایل کا انعقاد نہیں ہوا تو بی سی سی آئی کو لگ بھگ 4000 کروڑ روپئے کا نقصان برداشت کرنا پڑ سکتا ہے۔


error: Content is protected !!