Thursday, February 25, 2021
malegaontimes

سنگھو بارڈر پر ہنگامہ، مظاہرین کی تلوار سے ایس ایچ او زخمی، پولس کی جانب سے لاٹھی چارج اور آنسو گیس

یوم جمہوریہ کے موقع پر ٹریکٹر مارچ کے دوران ہوئے تشدد کے باوجود زرعی قوانین کو واپس لینے کا مطالبہ کرنے والے کسان سنگھو بارڈر پر ڈٹے ہیں۔ کسانون کے احتجاجی مقامات پر جمعہ کو ایک بار پھر سے ہنگامہ ہوگیا۔ خود کو مقامی باشندہ بتانے والے لوگوں کا ایک گروپ وہاں پہنچا اور دھرنا ختم کرکے راستہ کھولنے کا مطالبہ کرنے لگے۔ یہ لوگ ‘سنگھو بارڈر خالی کرو’ کے نعرے لگانے لگے۔ اس سے وہاں کے حالات اتنے بگڑ گئے کہ پولیس کو بے قابو بھیڑ کو کنٹرول کرنے کے لئے آنسو گیس تک کے گولے داغے۔ اطلاعات کے مابق، اس افراتفری کے درمیان مظاہرین کی تلوار سے علی پور کے ایس ایچ او پردیپ پالیوال زخمی ہوگئے۔

سنگھو سرحد پر پولیس نے مبینہ طور پر مقامی ہونے کا دعویٰ کرنے والوں اور کسانوں پر طاقت کا استعمال کیا۔ مقامی ہونے کا دعویٰ کرنے والے لوگ احتجاج کی جگہ خالی کرانے کے لئے احتجاج کر رہے تھے۔ اس دوران کسانوں سے ان کی جھڑپ ہوگئی۔ بتایا جاتا ہے کہ مظاہرین کی طرف سے پہلے پتھر بازی شروع کردی گئی تھی۔ اس کے بعد پولیس کو بھی سختی کرنی پڑی

بتایا جارہا ہے کہ سنگھو سرحد پر احتجاجی مظاہرہ کر رہے کسانوں کو وہاں سے ہٹانے کے لئے بوانا اور نریلا سے مبینہ طور پر مقامی لوگ پہنچے تھے۔ انہوں نے کسانوں پر پتھر بازی کی اور گالیاں دیں۔ کچھ کسانوں کو لاٹھیاں بھی ماری گئیں۔ کافی وقت تک پولیس نے مبینہ مقامی لوگوں کو سمجھایا، لیکن جب حالات بے قابو ہونے لگے تو پولیس کو آنسو گیس کے گولے داغنے پڑے اور لاٹھیاں بھی چلائیں۔

error: Content is protected !!