Friday, February 26, 2021
malegaontimes

پاورلوم کارخانے اور سائزنگیں 23 جون سے بند، ہائی کورٹ کے فیصلے کا انتظار

مالیگاؤں (نامہ نگار) مالیگاؤں میونسپل کارپوریشن جو ریاست میں D کلاس کا درجہ رکھتی ہے اس کے معاندار رویے سے عاجز آکر مالیگاؤں سائزنگ اونرس ایسوسی ایشن نے 23 جونج منگل سے مالیگاؤں کارپوریشن شہری حدود کی سبھی سائزنگوں کو بند رکھنے کا فیصلہ کیا ہے لیکن اس پر عمل در آمد کا انحصار اس دن ممبئی ہائی کورٹ میں سماعت کے بعد کیا فیصلہ صادر کیا جاتا رہے گا۔ اس طرح کا فیصلہ گزشتہ شب حسین سیٹھ کمپاؤنڈ میں منعقدہ مالیگاؤں سائزنگ اونرس ایسوسی ایشن کی میٹنگ میں کیا گیا ، جس کی صدارت عارف نسیم راکیل والا نے کی۔ اس میٹنگ میں سائزنگ مالکان نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ سائزنگ اونرس ایسوسی ایشن کے صدر یوسف الیاس نے اس موقع پر تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ سائزنگیں مسائل کی زد میں ہیں۔

نیشنل گرین ٹریبونل نے جو احکامات صادر نہیں بھی کیے تھے مہاراشٹر پولیوشن کنٹرول بورڈ اور کارپوریشن نے اس پر عمل در آمد کرتے ہوئے سائزنگوں کو میل کیا گیا۔ انصاف کے لیے جب ہائی کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا گیا تو عدالت سے راحت ملی اور مہاراشٹر پولیوشن کنٹرول بورڈ کو حکم دیا گیا کہ 10 جون تک سائزنگیں جاری کرنے سے متعلق موقف اختیار کیا جائے۔ لیکن MPCB نے سائزنگ مالکان کو نئی ممبئی IIT اور NEERJ (ناگپور) سے آفیسران کی وزٹ کے ساتھ سرٹیفکیٹ لاکر جمع کرادینے کی بندش عائد کردی کہ سائزنگوں میں فضائی آبی آلودگی نہیں ہوتی ہے تب ہی کوئی فیصلہ کیا جائے گا۔

گزشتہ شب ہوئی میٹنگ میں شہری صورتحال کا بھی جائزہ لیا گیا کہ پریشانی اور مجبوری کے حالات میں سائزنگیں بند کرنے کی سمت قدم اٹھایا جارہا ہے اور اس کے لیے حکام بالا کو بھی مکتوبات کے ذریعے آگاہی دی گئی ہے۔ سائزنگیں بند ہونے سے پاورلوم مزدور ، سائزر ، تراشن بھرنے وا لے ، حمال، گھڑی لگانے والے غرض صنعت سے جڑے ہوئے کئی شعبہ جات کے کام کاج متاثر ہوں گے۔ ایسے میں جو لوگ مہاراشٹر پولیوشن کنٹرول بورڈ اور نیشنل گرین ٹریبونل میں شکایت کا پلندہ لے کر پہنچتے ہیں یہ مزدور ان سے روزگار طلب کریں ۔ اس طرح کی گفتگو بھی یوسف الیاس نے پیش کی۔ میٹنگ میں اس بات کا تجزیہ بھی کیا گیا کہ پیر کو ایک بار پھر حکام بالا سے ملاقات کرتے ہوئے صورتحال پر گفت و شنید کی جائے گی۔

Ad:


free-home-delivery


error: Content is protected !!